There are no advertisements in the Mianwali yet

khty ho k chup rho k ab batien khatam hain

kh do k tmhen batien krne ka dil ab he nahin


khtay ho k ab jao yahan se hmain yun tng na kro

kh do k tmhen sath nibhanay ki chah ab ha he nhi


khty ho k ab tmhara mera sath ikhtitam ko puhncha

kh do k jo pal sath bitaey hn wo kbhi yad aeyngy nhi


khty ho k ye silsila e muhabbat dagdar hai jhoot hai

kh do k bss tmhen hmaari muhabaat ka aitbar he nhi


khty ho k apna payar dil anaayatain dfnaa chukay ho ab

ye kion nhi khty k hm se taluq nibhanay ki koi wja he nhi


khty ho k hm ne dukh dia aur tora hai tmharay dil ko

tora jo hm ne hai tou ab kya hum isay jorain b nahin


khty hain hm tmhen k ab jao aur sath chor do hmara

kionk ye maloom hai k tere bina hm jiyengy b nahin


ma keh dun k jeenay ki koi khawish nhi hai ab iss dil ko hasnaat

ye kesay kahun k tum bin ksshi ki bchi ab zindagi bhe nahin


tm khty they k janaan tere bina jeenay ka tsawwar he nhi

aj hmari 2 se zada batien krne pe pass rhny detay b nahin?


tum keh do k jao chor char k sb kch chli jao

kesay kahun k tm bin ik pl guzrta he nahin?


wo tmhara bar bar whtsapp se janay k liay plz plz khna?

qssam se jan jao k ks qdr drd hota hai tou kbhi kahogy nhi


ma pagal the jo teri hr bat ko sch maan lia ma ne

qasam Khuda ki jhooti meri muhabbat bhe nahin


tou khta tha k ajkl bss tuu he tu hai kssshiii

aaj ka tou dikhta ha lakin kal ka pta he nahin


chl aaj ye ma khud se kh dun k tu sch tera hr wada sch

shayd k tere waadun ma kisi kl ka koi waada he nahin


tu jan le k kis qadar dil ko aarzoo hai teri

tu jan le k kis qadar dil ko tarap hai teri

tu jan le k ks qadar abkhen roi hn tere liay

tu jan le k ks qadar payaar hai mjhy tm se

qasam se tu kbhi mjhy chor kr jaeyga nhi


tjh se milnay k liay kahin manatain maangi hain hasnaat

tere na milnay se wo mntain kbhi poori hongi nahin


meri hr bat jhooti hr afsana hr khwab jhoota

mgr ae janaan schi teri bhe herr baat nahin


meri roodad ma agrcha zoq e sukhan bht km hai jaanan

teri hr bat khnay pe muhabt se jagi writer ab jagegi nhi


ma maanti hun k meri muhabt chnd lfzun ki muhtaj nhi hny

alfaz khtm jzbat khtm mgr dil se kbhi muhbt khtm ho gi nhi


tm khtay ho k muhabbat k bina insan shair nhi kh skta

mjhy kion lgta hai merr shayri ki ab koi haisiat he nhi


ma kitna likhun kitna likhun k teri yaad na aey mjhay

ma kya krun k meri aankhen tjyy yad k kr roein b nahin


aansso nhi hain ....teri pyaari yadun ki brsaat hai ye

lkn drti hun k ma in ma beh kr ta umr kho na jaun kahin


teri yaadein dil ko sukoon se rhany nhi deti hasnaat

mere in drdun ka ilaaj kiay bgair tu kahin jana nahin


kis munh se tjhy rokun teri shaan ma kch kahun

kionk ab ma shyd teri minnat krne k qabil b nhi


tm khty ho k hmari batun ne tmhen ktny din tk rulaya

ab tumhari yadun ma kya hm umr bhr royengy nahin


smjh nahin ati k fqt Allah se ab zindagi mangun ya phir mout

tu apne sath rkhna nhi chahta ma tere bgair reh skti he nahin


mere zoq ma zrf ma kmi ho gi shyad hasnaat

lkn teri batun ko dimagh se kbbi socha he nhi


tm jo khty ho k jb milna nhi tou iss bat ka faida kya hai

maloom hmain zindagi ki shaam honay ka bhe nahin


drr si gae ma aaj jb dekha ma ne ainay ma khud ko

ye thaan lia k tere bin ab ainay ma dekhungi he nhi


aina b wohi jo zahri rang ko dikhata hai shayd

kionk kisi drd ko dikhnay wala aina bna b nahin


syaanay khty hain k dil b ak ainaa hai srtaaj

lakn uss ainay ko sahi se shyd dekha he nhi


dekh leta tou saaf nhi aks tou nzar aa jata hmara

lakin shayd tjh ma ye bat krne ka hosla he nahin


na phly na ab ma magti hun tjh se kch b jaan

lkn apni duano ma ab tou mjhy mangna b nhi


maangun gi nahi kionk shyad tou chahta hau

dil ko bnanay wala shyd tjhy dil se nikaly ga nahin


meri bebssi tou dekh k shair b kh rhe aur ro b rhe

teri tsweer ma b hlki si udaasi mjhy brdaasht nahin


ma teri khushi mangti hun Rabb se k tere drd mitt jaien yar

lakin shyd gunahon k sbab meri dua ma b koi asar he nahin


iss shoq se yqeen se mangun gi ma tere liay hr pal dua

k mere sohnay Allah k han dhair hai magar andher nahin

Poet : Jaan e Mann

Show more
0
15
https://avalanches.com/pk/minwli_the_world_bank_in_pakistan115787_19_04_2020

The World Bank In Pakistan

Summary:-

Pakistan has important strategic endowments and development potential. The increasing proportion of Pakistan’s youth provides the country with a potential demographic dividend and a challenge to provide adequate services and employment.


In July 2019, Pakistan entered into a 39-month Extended Fund Facility (EFF) arrangement with the International Monetary Fund. Stabilization measures under the EFF were expected to moderate aggregate demand pressures in the economy. Leading indicators suggested a slowdown in growth in the first 7-8 months of FY20[1]. The output of large-scale manufacturing (which accounts for around 50 percent of industrial output) contracted by 3.4 percent in Jul-Jan FY20. The agriculture sector, however, registered growth in the rice and livestock sub-sectors.

However, the rapid spread of the COVID-19 virus since February 2020 has brought economic activity to a near-halt. Most of the country has been placed under a partial lockdown. The closure of non-essential businesses and domestic supply chain disruptions are having a significant impact on wholesale and retail trade and transport, storage and communication, the largest sub-sectors of the services sector. The drop in domestic and global demand is also compounding the strains on the industrial sector, which is hit by both supply and demand shocks. In addition, the country’s main industrial sector – textiles and apparel – is highly exposed to COVID-19-related disruptions due to its labor-intensity.

Average inflation increased to 11.8 percent during Jul-Mar FY20 (from 6.8 percent in Jul-Mar FY19) reflecting upward adjustments in administrated prices and exchange rate depreciation pass-through. The State Bank of Pakistan (SBP) maintained a tight monetary stance during this period, keeping the policy rate at 13.25 percent to dampen inflationary expectations. However, as the COVID-19 pandemic spread, it reduced the policy rate to 11.0 percent in March 2020.

The Current Account Deficit (CAD) narrowed to 1.0 percent of GDP in Jul-Feb FY20, from 3.5 percent in the same period in FY19, thanks to a 17.5 percent decline in goods imports. This, together with large multilateral disbursements and higher foreign investment flows, helped shore up gross international reserves to US$13.2 billion (as of March 27th, 2020)—or equivalent to 3.5 months of imports. However, due to global developments, foreign investors have offloaded more than half of their position in domestic securities since February 2020. The exchange rate, which had remained relatively stable through June-February FY20, depreciated by 7.3 percent in March.

In the first half of FY20, the fiscal deficit stood at 2.3 percent of GDP, compared to 2.7 percent in the first six months of FY19. The fiscal adjustment was achieved through increases in domestic revenue collections and slower growth in non-interest recurrent expenditures. However, the COVID-19 pandemic is likely to put significant pressure on expenditures whereas revenue collections are expected to be negatively impacted. Pakistan’s public debt, which stood at 87.5 percent of GDP at the end of FY19, may rise as a result.

Real GDP growth is projected to contract by 1.3 percent in FY20 as domestic and global economic activity slows down sharply in the last four months of the fiscal year. The outbreak of COVID-19 will impact growth beyond FY20. Under the baseline scenario, growth will remain muted in FY21 before reaching 3.2 percent in FY22. Inflation is expected to average 11.8 percent in FY20 and to gradually decline thereafter.

The current account deficit is projected to narrow to 1.9 percent in FY20, as imports contract more than exports. Export growth is expected to remain negative in FY21 but to subsequently rebound. Similarly, imports are expected to recover slowly from FY22 on wards, as domestic industrial activities pick up. Remittances are expected to contract in FY20 and FY21, respectively, due to lower growth in the Gulf Cooperation Council economies. Increased multilateral and bilateral flows are expected to be the main financing sources over the medium-term.

The fiscal deficit is expected to remain elevated in FY20 and FY21. Revenue mobilization efforts will be negatively impacted by subdued domestic activity, while expenditures will increase to contain the spread of COVID-19 and support the economy. The fiscal deficit is expected to fall gradually by FY22 as the impact of the crisis tapers-off. However, the public debt-to-GDP ratio is expected to increase and remain elevated over the medium-term, with Pakistan’s exposure to debt-related shocks remaining high.

There are considerable downside risks to the outlook. The immediate challenge for the government is to contain the spread of the COVID-19 pandemic, while minimizing economic losses and protecting the poorest. In the medium-to-long term, the government should remain focused on implementing structural reforms to boost private investment sustainably.

Show more
0
41
Other News Pakistan

شمائلا رند


پنھنجن کانسواء ڀلا ڪھڙيون عيدو۔۔!!

عيد منعي! خوشي،راحت جنھن ڏينھن جي اچڻ سان ھڪ پاسي محبتن جو جنم ٿيندو آھي ته،ساڳئي ويلي غريبن کي غريب ھئڻ جو احساس به وڌي ويندو آھي! ڇاڪاڻ ڪنھن احساس مند شخص چواڻي ته،آئون عيد جھڙا ڀلارا ۽ خوشين جھڙا ڏينھن ناھيان ملھائيندو ڇو جو انھن خوشين وارن ڏينھن جي اچڻ سان غريبن کي پنھنجي غريب ھئڻ جو احساس وڌي ويندو آھي! عيد جو ڏينھن جتي انيڪ خوشيون کڻي کڻي حاضر ٿيندو آھي، اتي ھي ڏينھن انھي لاء ”خزان“ به بڻجي پوندو آھي! ڇاڪاڻ ته پنھنجن کان پري رھڻ ۽ وري خوشي جھڙن ڏھاڙن جي اچڻ سان جتي ڪنھن پل لاءِ خوشي محسوس ٿيندي آھي، اتي پنھنجائپ جو احساس سچ ۾ آڪٽوبر،نومبر ۽ ڊسمبر ئي لڳندو آھي٠٠ مطلب جيڪي پاڻ کي اڪيلو سمجھندا آھن نه چاھيندي به ھھڙن ڏينھن تي پنھنجن کان پري رھن ٿا، سفري يا وري جسماني مطلب نفرتن جي نگري ۾ ڦاٿل ماڻھو ويجھو ھوندي به ڄڻ زميني وڇوٽي تي ھوندا آھن!عيد ھڪ خوشين جو وقت آهي، پر اهو اسان مان انهن ماڻهن لاءِ به بيحد اداسي آهي، جيڪي پنهنجي خاندان جي ميمبرن سان گڏ خوشيون ونڊ نٿا ڪن ٿا يقينن سڀني رشتن سان گڏ ماءُ پيءُ جي غير موجودگي جو به ڪو احساس ٿي نٿو سگھي!جيتوڻيڪ منهنجي ماءُ کي وڇڙيل ڇھ سال ٿي ويا آهن، ۽ منهنجي بابا سائين کي چوڏهن سال ٿيا آهن،، سچ ۾ سوچيندي آھيان ڀلا امڙ ۽ بابي کان سواءِ ڀلا شمائلا جون عيدون به ڪھڙيون بس رسم نڀائڻ عيد ملھائڻ مجبوري آھي باقي اندر جي اڌمن جي ور چڙھيل خاص طور تي پنھنجائپ جو احساس ۽ جذبو رکندڙن لاءِ خوشين جي سڀئي ڏينھن ڄڻ وڌيڪ اذيت ڀريا لڳندا آھن،جڏهن ته دنيا جا ھر ڪم ھميشه رھن ٿا، پر ماءُ پيءُ ھميشه ناهي رھندا، ماءُ پيءُ کي وقت ڏيڻ گهرجي عيدون به انھن ساڻ ھونديون آھن، ۽ جن جا ماءُ پيءُ ھن دنيا ۾ نه آھن، ته انهن کي گھرجي ته قبرستان تي وڃن،

Show more
0
8

صبر۔ ایک ایسا لفظ جو ہم اکثر سنتے ہیں۔ غم میں، پریشانی میں، درد میں اور تکلیف میں۔ یہاں تک کہ جب ہماری کوئی دعا پوری نہ ہو رہی ہو تب بھی سب سے پہلے جو لفظ ہمارے ذہن میں آتا ہے وہ صبر ہوتا ہے۔ لیکن یہ صبر ہوتا کیا ہے؟

صبر عربی زبان کا لفظ ہے جس کا روٹ ورڈ (ص۔ب.ر) ہے ۔ صبر کا مطلب خود کو باندھ لینا ہوتا ہے، باز رکھنا یا خود کو منفی ردعمل سے روکنا ہے۔ صبر آنسو نہ بہانے کا نام نہیں ہے کیونکہ اگر آنسو نہ بہانے ہوتے تو اللہ آنسو بناتے ہی نہیں۔ صبر تو ایک پوزیٹو ردعمل کا نام ہے۔

صبر کا مطلب ہے :

درد اور تکلیف میں یہ یقین رکھ کر پر سکون رہنا کہ یہ اللہ کی آزمائش ہے۔ اس بات پر یقین رکھنا کہ اگر غم اور پریشانی اللہ نے دی ہے تو اس کا حل بھی وہی نکالے گا۔

یہ یقین رکھنا کہ اگر وہ ہماری دعا ابھی نہیں سن رہا تو کبھی تو سنے گا۔

صبر اس چیز کا نام ہے کہ ہم اپنی اس ایک قبول نہ ہونے والی دعا سے نظریں ہٹا کر دوسری نعمتوں کو دیکھیں۔ اس وقت میں قبول ہونی والی باقی دعاؤں پر نظریں جمائیں اور خود کو مایوسی کے سمندر سے نکال لیں۔

پتا ہے ایک بار میں نے کہیں سنا تھا کہ ہمیں اللہ سے صبر نہیں مانگنا چاہئے کیونکہ اس کے بعد ہم اپنی زندگی کے ایسے فیز میں داخل ہوجاتے ہیں جہاں آزمائشیں ہوتی ہیں، تکالیف ہوتیں ہیں تاکہ ہم صبر کرنا سیکھ سکیں۔

لیکن صبر کے معنی سمجھنے کے بعد مجھے لگتا ہے کہ ہمیں اللہ سے صبر ضرور مانگنا چاہئے۔ صبح شام مانگنا چاہئے بلکہ ہر وقت مانگنا چاہئے کیونکہ جب ہم میں صبر ہو گا تو ہم مایوس نہیں ہوں گے۔ ڈھلتا سورج دیکھ کر ہمارے اندر تنہائی کا جو غبار اٹھتا ہے وہ نہیں اٹھے گا۔ ہمارے اندر کا سمندر پر سکون ہو جائے گا۔

Positivity is the keyto happiness 🖤🖇️

Show more
0
13
https://avalanches.com/pk/peshawar_1937286_29_04_2022

سیاسی شعور

مدثرعباس


اس وطن عزیز میں جمہوریت کو ایک اعلی مقام حاصل ہیں، جو لوگ اس وطن عزیز کے ہمدرد ہے وہی لوگ اس وطن عزیز میں رہتے ہوئے غریب لوگوں کو انکے حقوق دلانے میں سیاسی طریقہ کار کو اپنا کر ایک حاص فلور پر غریبوں کے حقوق کیلئے لڑتے ہیں، اب یہاں پر دو قسم سیاسی لوگ سیاست کرتے ہیں جو ایک دوسرے میں ضم ہونے جارہی ہیں، ایک اعلی تعلیم یافتہ اور دوسرے اَن پڑھ لوگ، کہنے کا مطلب ہے کہ سیاست میں ایک قسم گروہ ضم ہورہی ہیں، جو کہ نا تو سیاست کا طریقہ کار جانتے ہے اور نا ہی تنظیم سازی، وہی گروہوں میں سیاسی شعور کی عدم موجودگی کے باعث یہ سیاست سے فرقہ واریت کا راستہ اختیار کرلیتی ہیں _ جو کہ اس سے بدامنی کو پورا موقع مل جاتی ہیں اور وہ اس ریاست کی ساکھ کو مٹی میں ملا کر خاک کردیتی ہیں، تو سیاست میں فرقہ واریت سے بچنے کیلئے سیاسی لیڈروں کو سب سے پہلے تعلیم و تربیت پر کام کرنا ہوگا اور اس کے بعد سیاسی شعور کو لوگوں میں ایک مہذب انداز سے پیدا کرنے ہوگا جو کہ لوگوں میں دوسرے سیاسی پارٹیوں اور اُن کے کارکنوں کو بھی عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتاہوں، پر اس وطن عزیز میں سیاسی لیڈروں کا منشور، گالی گلوچ، چور ڈاکوں، پٹواری، یوتھیا، اسکے علاوہ سیاسی لیڈروں کو کہنے کیلئے کچھ بھی نہیں، کیونکہ نا تو اس ملک عزیز میں بلوچ قوم پر ظلم ہورہاہیں نا تو یہ ملک عزیز ترقی میں کسی کے پیچھے ہیں جو کہ سیاسی لیڈر اس پر کام کریں اور اس ملک عزیز کو دنیا کی نظروں میں اہمیت دیں ..........

یہاں پر ہمارے پاس سیاسی شعور کی کمی کا امدازہ اس لگایا جاسکتا ہیں کہ کوئی جرنلسٹ سوال اٹھائے تو انکو بھی گالیوں کا ہار پہنایا جاتا ہیں اور یہ چیز پاکستان کو اندر سے کمزور کرنے میں حد درجے مدد دیتا ہیں جو کہ زوال کی نشانیوں میں سے ایک ہیں


Show more
0
4
https://avalanches.com/pk/peshawar_1934405_28_04_2022


افلاس اور معاشرتی بھوک


مدثر عباس

14

اگست کی رات تھی وطن کی سلامتی کا رہاتھا کہ وطن کے باسیوں نے ایک دوراندیشی جیسی گہری سوچ میں گم کردیا ـ اور یہ سلسلہ معاشرے کے سمندر کی دھاڑے مارتی ہوئی ایک زوردار لہر پر جا کے رکا، جو ہے مسئلہ غربت _ غربت کبھی انسان کو وراثت میں ملتی ہیں اور کبھی وراثت ہی انسان کو افلاس کے چوکھٹ پر لاکے پھینک دیتی ہیں - آج کل انسان اسی بلا سے چھٹکارا حاصل کرنے کی بھرپور جدوجہد کررہاہے- اور جب وہ کسی کی دہلیز پر قدم رکھتا ہے- تو وہ قدم جو اس نے نہایت تنگدستی اور غربت کی وجہ سے رکھی ہوتی ہیں وہی اسکی عزت اور مال کی اوبال اور زوال کا سبب بن کر ابھرتی ہےـ کیونکہ جہاں پر دوسرے کے حق کو اپنا حق سمجھ کر بیچا جاتا ہے ـ وہاں پر کیونکر ایک خاندان خوشحال رہ سکتا ہیں ـ دوسری طرف جب چار بچوں کو غربت کی ٹھوکری میں لئے ایک بیوہ ان کی مستقبل کی تلاش میں مدد کی رسی کا ایک سرا تھام لیتی ہیں ـ تو وہاں پر جنسی ہوس کے بھوکے درندے رسی کا دوسرا سرا پکڑے نہایت بے پرواہی اور بے دردی سے اسکی مجبوری کو پیروں تلے روند دیتی ہیں ـ اور وہ مجبوری کی حالت میں پیٹ کی بھوک مٹانے کیلئے اپنے نفس کا سودا کرتی ہےـ

یہ حوس کے بھوکے اور نفس کے غلام درندے اس معاشرے کیلئے ناسور بنتی جارہی ہیں ـ جس کی بیخ کنی جتنا جلد ممکن ہوں ـ کیا جانا چاہئے - مگر افسوس صد افسوس کہ ہمارا وطن جو ایک اسلامی ریاست کے ماخوذ ہے ـ

جو لاالہ الااللّٰہ محمد رسول اللّٰہ کے نام پر بنا ہےـ

جو زندگی گزارنے کا سلیقہ سکھاتا ہےـ

جس میں رہ کر ایک انسان اپنے آپ کو محفوظ سمجھتا ہیں

آج اسکا قانون اندھا ہوچکا ہے ـ اجک اسلامی ریاست کے ہوتے ہوئے ہم اتنے کمزور ہوچکے ہیں کہ ہمارے معاشرے میں عزت چادر اور چاردیواری تک محفوظ نہیں ہے اور ہم خواب خرگوش کے مزے لیتے پھررہے ہیں ـ انتہائی افسوس کا مقام ہےـ ہمیں اپنی گریبانوں میں جھانکنا چاہئے کہ ایک اسلامی مملکت کے ہوتے ہوئے ہم عزتوں کو محفوظ نہیں کرسکتے ـ آئیں عزم کریں! ہمیں خود اٹھنا ہوگا اور ہوس کے ان پجاریوں کا سر کچلنا ہوگا ورنہ مستقبل میں یہ ہماری نسلوں کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑینگے جسکے ہم خود زمہ دار ہونگے -


Show more
0
2
https://avalanches.com/pk/peshawar_1934401_28_04_2022

اہلیت بدعنوانی کو شکست دیتی ہے


  • مدثرعباس

رشوت یا بدعنوانی سے مراد ناجائز زرائع آمدنی حاصل کرنا ہےـ جو کسی فرد سرکاری یا غیر سرکاری ادارے کو نقصان پہنچنے کا سبب ہوـ

رشوت یا بدعنوانی جو اس وقت ایک لاعلاج مرض کی طرح ہو- اور دن بہ دن بڑھتی جارہی ہیں ـ جس کا فوری طور پر کوئی حل بھی ممکن نظر نہیں آرہا اس وجہ سے معاشرے تباہی کی لپیٹ میں ہےـ ایک عام آدمی سے لے کر بڑے آدمی تک لوگوں کی اکثریت اس برائی میں مبتلا ہیں ـ افسوس ناک پہلوں یہ ہے کہ حکومتوں کے اعلٰی عہدیدار سیاستدان سب کے سب اس بہتی کنگا میں ہاتھ دھوں رہے ہیں ـ یہ جمہورت اور انسانی حقوق کو کمزور کرتی ہیں سرکاری ونجی وسائل کو بہالے جاتی ہےـ لوگوں میں جب تعلیم ہوگی تو ان شعور ہوگی تو ان کا شعور بیدار ہوگا ـ جو وہ اپنے اور سہولتوں کے حصول کیلئے کوشش کرسکتے ہےـ لیکن تعلیم کی کمی بھی بدعنوانی کو فروغ دیتی ہےـ جو وہ اپنے حقوق حاصل کرنے کے طریقے سے اگاہ نہیں کرتے اور تعلیم کے فقدان کی وجہ سے بدعنوانی لوگ ایسے افراد کا استحصال کرتے ہے جو اپنے حقوق سے اگاہ نہیں ہوتےـ بدعنوانی کو شکست دینے کیلئے ہر انسان کی بہترین تربیت ہونی چاہئے ـ اچھی اور بہترین تربیت سب سے پہلے ماں کی گود سے ملتی ہیں، جب ماں باپ اپنے بچوں کو جس طرح تربیت دیتے ہیں تو وہ وہی راستہ اختیار کرلیتے ہیں قابلیت اور اعلٰی تعلیم اہلیت بدعنوانی کا بہترین انتقام ہےـ یہ انتقام جاری ہے اور جاری رہے گا ـ جس علاقے میں بہترین تربیت اعلٰی تعلیم قابلیت و اہلیت اور ایمانداری ہو تو وہاں بدعنوانی کا نام ونشان ہی نہیں رہتا ـ جہاں اہلیت و ایمانداری ہو تو وہاں بدعنوانی کو لازمی طور پر شکست ہوگی ـ ورنہ یہ ایسی بیماری ہے کہ ختم ہونے کا نام ہی نہیں لیتی ہر ادارے میں یہ بیماری موجود ہےـ جب ادارے خراب ہوں تو پورا ملک زوال زوال پذیر ہوتا ہےـ بدعنوانی یا کرپشن کو ختم کرنے میں والدین اور ساتذہ کا کردار بہت اہم ہےـ اس لئے نئی نسل کو بہترین تربیت اور اخلاقیات فراہم کرے ـ تا کہ وہ غلط کام نہ کرے انصاف اور حقوق العباد کا استعمال کریں پھر سارا نظام میرٹ پر کام کریں گا جہاں میرٹ ہوگا وہی ترقی ہوگی ـ اہلیت و قابلیت کے ساتھ ساتھ بہترین کردار ہونا بھی لازمی ہے ـ جب اہلیت موجود نہ ہوں تو یہ بیماری اور بڑھتی جارہی ہےـ درجہ بندی فہرست میں پاکستان بھارت سمیت جنوبی ایشیاء کے کئی ممالک شامل ہیں ـ اب بھی ہمارے معاشرے میں ایسے لوگ موجود ہیں ـ لیکن بہت کم ہے جو بدعنوانی کو شکست دے سکتے ہیں ـ

Show more
0
2
https://avalanches.com/pk/mardan_former_prime_minster_of_islamic_republic_of_pakistan_tweeted1932734_26_04_2022

Former Prime Minster of Islamic republic of Pakistan Tweeted

Strongly condemn the terrorist attack targeting Chinese teachers of Karachi University. This is yet another attack with a specific agenda of trying to undermine Pak-China strategic r'ship. We must ensure defeat of this foreign-backed agenda of our enemies.

Show more
0
14

اسلام علیکم

مجھے ڈائری لکھنے کا شوق ہے۔ لیکن اب میں ڈائری لکھ کے بور ہو جاتی ہوں تو میں نے سوچا کیوں نہ میں کچھ ایسا لکھوں جسے باقی لوگ بھی پڑھ سکیں اور اس سے کچھ سیکھ سکیں؟

So I made this account some time ago(April 21, 2022) and I hope we'll learn something from it۔

You guys can call me "dreamer. ''

You can suggest me topics to write about.

Show more
0
10