اہلیت بدعنوانی کو شکست دیتی ہے پشاور

اہلیت بدعنوانی کو شکست دیتی ہے


  • مدثرعباس

رشوت یا بدعنوانی سے مراد ناجائز زرائع آمدنی حاصل کرنا ہےـ جو کسی فرد سرکاری یا غیر سرکاری ادارے کو نقصان پہنچنے کا سبب ہوـ

رشوت یا بدعنوانی جو اس وقت ایک لاعلاج مرض کی طرح ہو- اور دن بہ دن بڑھتی جارہی ہیں ـ جس کا فوری طور پر کوئی حل بھی ممکن نظر نہیں آرہا اس وجہ سے معاشرے تباہی کی لپیٹ میں ہےـ ایک عام آدمی سے لے کر بڑے آدمی تک لوگوں کی اکثریت اس برائی میں مبتلا ہیں ـ افسوس ناک پہلوں یہ ہے کہ حکومتوں کے اعلٰی عہدیدار سیاستدان سب کے سب اس بہتی کنگا میں ہاتھ دھوں رہے ہیں ـ یہ جمہورت اور انسانی حقوق کو کمزور کرتی ہیں سرکاری ونجی وسائل کو بہالے جاتی ہےـ لوگوں میں جب تعلیم ہوگی تو ان شعور ہوگی تو ان کا شعور بیدار ہوگا ـ جو وہ اپنے اور سہولتوں کے حصول کیلئے کوشش کرسکتے ہےـ لیکن تعلیم کی کمی بھی بدعنوانی کو فروغ دیتی ہےـ جو وہ اپنے حقوق حاصل کرنے کے طریقے سے اگاہ نہیں کرتے اور تعلیم کے فقدان کی وجہ سے بدعنوانی لوگ ایسے افراد کا استحصال کرتے ہے جو اپنے حقوق سے اگاہ نہیں ہوتےـ بدعنوانی کو شکست دینے کیلئے ہر انسان کی بہترین تربیت ہونی چاہئے ـ اچھی اور بہترین تربیت سب سے پہلے ماں کی گود سے ملتی ہیں، جب ماں باپ اپنے بچوں کو جس طرح تربیت دیتے ہیں تو وہ وہی راستہ اختیار کرلیتے ہیں قابلیت اور اعلٰی تعلیم اہلیت بدعنوانی کا بہترین انتقام ہےـ یہ انتقام جاری ہے اور جاری رہے گا ـ جس علاقے میں بہترین تربیت اعلٰی تعلیم قابلیت و اہلیت اور ایمانداری ہو تو وہاں بدعنوانی کا نام ونشان ہی نہیں رہتا ـ جہاں اہلیت و ایمانداری ہو تو وہاں بدعنوانی کو لازمی طور پر شکست ہوگی ـ ورنہ یہ ایسی بیماری ہے کہ ختم ہونے کا نام ہی نہیں لیتی ہر ادارے میں یہ بیماری موجود ہےـ جب ادارے خراب ہوں تو پورا ملک زوال زوال پذیر ہوتا ہےـ بدعنوانی یا کرپشن کو ختم کرنے میں والدین اور ساتذہ کا کردار بہت اہم ہےـ اس لئے نئی نسل کو بہترین تربیت اور اخلاقیات فراہم کرے ـ تا کہ وہ غلط کام نہ کرے انصاف اور حقوق العباد کا استعمال کریں پھر سارا نظام میرٹ پر کام کریں گا جہاں میرٹ ہوگا وہی ترقی ہوگی ـ اہلیت و قابلیت کے ساتھ ساتھ بہترین کردار ہونا بھی لازمی ہے ـ جب اہلیت موجود نہ ہوں تو یہ بیماری اور بڑھتی جارہی ہےـ درجہ بندی فہرست میں پاکستان بھارت سمیت جنوبی ایشیاء کے کئی ممالک شامل ہیں ـ اب بھی ہمارے معاشرے میں ایسے لوگ موجود ہیں ـ لیکن بہت کم ہے جو بدعنوانی کو شکست دے سکتے ہیں ـ

https://avalanches.com/pk/peshawar_1934401_28_04_2022
0
2
There are no advertisements in the Peshawar yet
Other News Mudassir Abbas
https://avalanches.com/pk/peshawar_1937286_29_04_2022

سیاسی شعور

مدثرعباس


اس وطن عزیز میں جمہوریت کو ایک اعلی مقام حاصل ہیں، جو لوگ اس وطن عزیز کے ہمدرد ہے وہی لوگ اس وطن عزیز میں رہتے ہوئے غریب لوگوں کو انکے حقوق دلانے میں سیاسی طریقہ کار کو اپنا کر ایک حاص فلور پر غریبوں کے حقوق کیلئے لڑتے ہیں، اب یہاں پر دو قسم سیاسی لوگ سیاست کرتے ہیں جو ایک دوسرے میں ضم ہونے جارہی ہیں، ایک اعلی تعلیم یافتہ اور دوسرے اَن پڑھ لوگ، کہنے کا مطلب ہے کہ سیاست میں ایک قسم گروہ ضم ہورہی ہیں، جو کہ نا تو سیاست کا طریقہ کار جانتے ہے اور نا ہی تنظیم سازی، وہی گروہوں میں سیاسی شعور کی عدم موجودگی کے باعث یہ سیاست سے فرقہ واریت کا راستہ اختیار کرلیتی ہیں _ جو کہ اس سے بدامنی کو پورا موقع مل جاتی ہیں اور وہ اس ریاست کی ساکھ کو مٹی میں ملا کر خاک کردیتی ہیں، تو سیاست میں فرقہ واریت سے بچنے کیلئے سیاسی لیڈروں کو سب سے پہلے تعلیم و تربیت پر کام کرنا ہوگا اور اس کے بعد سیاسی شعور کو لوگوں میں ایک مہذب انداز سے پیدا کرنے ہوگا جو کہ لوگوں میں دوسرے سیاسی پارٹیوں اور اُن کے کارکنوں کو بھی عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتاہوں، پر اس وطن عزیز میں سیاسی لیڈروں کا منشور، گالی گلوچ، چور ڈاکوں، پٹواری، یوتھیا، اسکے علاوہ سیاسی لیڈروں کو کہنے کیلئے کچھ بھی نہیں، کیونکہ نا تو اس ملک عزیز میں بلوچ قوم پر ظلم ہورہاہیں نا تو یہ ملک عزیز ترقی میں کسی کے پیچھے ہیں جو کہ سیاسی لیڈر اس پر کام کریں اور اس ملک عزیز کو دنیا کی نظروں میں اہمیت دیں ..........

یہاں پر ہمارے پاس سیاسی شعور کی کمی کا امدازہ اس لگایا جاسکتا ہیں کہ کوئی جرنلسٹ سوال اٹھائے تو انکو بھی گالیوں کا ہار پہنایا جاتا ہیں اور یہ چیز پاکستان کو اندر سے کمزور کرنے میں حد درجے مدد دیتا ہیں جو کہ زوال کی نشانیوں میں سے ایک ہیں


Show more
0
4
https://avalanches.com/pk/peshawar_1934405_28_04_2022


افلاس اور معاشرتی بھوک


مدثر عباس

14

اگست کی رات تھی وطن کی سلامتی کا رہاتھا کہ وطن کے باسیوں نے ایک دوراندیشی جیسی گہری سوچ میں گم کردیا ـ اور یہ سلسلہ معاشرے کے سمندر کی دھاڑے مارتی ہوئی ایک زوردار لہر پر جا کے رکا، جو ہے مسئلہ غربت _ غربت کبھی انسان کو وراثت میں ملتی ہیں اور کبھی وراثت ہی انسان کو افلاس کے چوکھٹ پر لاکے پھینک دیتی ہیں - آج کل انسان اسی بلا سے چھٹکارا حاصل کرنے کی بھرپور جدوجہد کررہاہے- اور جب وہ کسی کی دہلیز پر قدم رکھتا ہے- تو وہ قدم جو اس نے نہایت تنگدستی اور غربت کی وجہ سے رکھی ہوتی ہیں وہی اسکی عزت اور مال کی اوبال اور زوال کا سبب بن کر ابھرتی ہےـ کیونکہ جہاں پر دوسرے کے حق کو اپنا حق سمجھ کر بیچا جاتا ہے ـ وہاں پر کیونکر ایک خاندان خوشحال رہ سکتا ہیں ـ دوسری طرف جب چار بچوں کو غربت کی ٹھوکری میں لئے ایک بیوہ ان کی مستقبل کی تلاش میں مدد کی رسی کا ایک سرا تھام لیتی ہیں ـ تو وہاں پر جنسی ہوس کے بھوکے درندے رسی کا دوسرا سرا پکڑے نہایت بے پرواہی اور بے دردی سے اسکی مجبوری کو پیروں تلے روند دیتی ہیں ـ اور وہ مجبوری کی حالت میں پیٹ کی بھوک مٹانے کیلئے اپنے نفس کا سودا کرتی ہےـ

یہ حوس کے بھوکے اور نفس کے غلام درندے اس معاشرے کیلئے ناسور بنتی جارہی ہیں ـ جس کی بیخ کنی جتنا جلد ممکن ہوں ـ کیا جانا چاہئے - مگر افسوس صد افسوس کہ ہمارا وطن جو ایک اسلامی ریاست کے ماخوذ ہے ـ

جو لاالہ الااللّٰہ محمد رسول اللّٰہ کے نام پر بنا ہےـ

جو زندگی گزارنے کا سلیقہ سکھاتا ہےـ

جس میں رہ کر ایک انسان اپنے آپ کو محفوظ سمجھتا ہیں

آج اسکا قانون اندھا ہوچکا ہے ـ اجک اسلامی ریاست کے ہوتے ہوئے ہم اتنے کمزور ہوچکے ہیں کہ ہمارے معاشرے میں عزت چادر اور چاردیواری تک محفوظ نہیں ہے اور ہم خواب خرگوش کے مزے لیتے پھررہے ہیں ـ انتہائی افسوس کا مقام ہےـ ہمیں اپنی گریبانوں میں جھانکنا چاہئے کہ ایک اسلامی مملکت کے ہوتے ہوئے ہم عزتوں کو محفوظ نہیں کرسکتے ـ آئیں عزم کریں! ہمیں خود اٹھنا ہوگا اور ہوس کے ان پجاریوں کا سر کچلنا ہوگا ورنہ مستقبل میں یہ ہماری نسلوں کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑینگے جسکے ہم خود زمہ دار ہونگے -


Show more
0
2
Other News Peshawar

انسانی ذندگی كا مقصد كیا ہے؟

انسانی ذندگی کا مقصد یہ ہے کہ انسان اللہ کی عبادت کرے ،لوگوں كو نیکی كا حکم دے اور برائی سے منع کرے۔۔۔۔

0
7
https://avalanches.com/pk/peshawar_eliminate_negative_thoughts_and_lose_weight1904120_27_12_2021

Eliminate Negative Thoughts And Lose Weight


He thinks thousands of thoughts every day. He speaks to himself more than anyone else. He is your trusted and trusted mentor. Most of the conversations you have with you will never be shared with anyone else because doing so will expose the "real" you. You are full of doubts, worries, sadness, guilt, pain and disappointment.


But this is not “the real you” at all. This is what your ego and your beliefs are built for. These negative beliefs were created by you, and accepted by you as true. Sadly, nothing could be further from the truth.


Where did this false idea come from? They were very outgoing; parents, teachers, coworkers, and friends. They may have planted seeds by saying something like “you are fat” and you have developed those words to the point that they become your reality.


You let your whole life be governed by some vague comments made over the years. No one has the right or the power to tell you who you are. Only you know who you really are and what is in your heart.


At birth you entered this world without your present burdens of wrong belief. You have entered this world as a heap of joy filled with infinite power and opportunity.


I came here to tell you that you have not changed. You stand still and you will always be a beautiful bunch of unlimited energy and possibilities.


The only difference is what you pay attention to. Let me ask you a question. If you stop all the negative comments you currently have with you such as;


- I am very fat


- Why someone wants to love me


- I will never be thin


- I always fail


And the list goes on and on… How would you feel? Do you think you can feel it emotionally? Do you think you can feel happy? Do you think you can feel more confident?


Now you think about how your life could change if you could go further and change your speech by talking only about yourself. If you take the time and focus on what you love about yourself and focus only on your emotional state will be good until you are able to achieve anything.


Once you start looking for the good things inside you, you will be amazed to see your beauty always just below the surface. You have never been anything else at that time that pile of bright joy that entered the world years ago. It is easy to reveal the positive aspects of yourself by asking specific questions.


- What exactly is it?


- Who has benefited from being me on earth?


- Who am I, what in my heart do I know for myself?


- What do I like about my body?


Your goal is to make you feel good now. How do you feel now? If you just look at what you feel is good for you, you will feel happy, you will be happy. Decide right here and now how you want to feel. Decide that you will always look for the good in you and appreciate that good.


So what does all of this have to do with weight loss? Everything !!! Your emotional state is a control valve that determines what you draw from your experience. The way you speak on your own builds your beliefs and your subconscious plans. So you need to ask yourself if you want your beliefs and myths to be based on false reasoning. Or you want your beliefs to be based on the truth, that you are a perfect person and have always been a perfect person.


Start loving yourself and growing today. Let the fun, playfulness and enthusiasm you had naturally as a child begin to flow into your daily affairs. Allow yourself to celebrate each success no matter how small. Love and value every opportunity you have. Do this every day and watch your weight begin to melt just as your old negative stereotypes about you begin to melt.

Imad Khan

Show more
0
5
https://avalanches.com/pk/peshawar_get_rid_of_your_diabetes1904072_27_12_2021

Get Rid Of Your Diabetes

Today, there are at least 20 million people living with diabetes in the United States and the sad part is that it is possible to prevent and cure diabetes and type 2 diabetes naturally with a healthy diet, and basic exercise.


People at risk of contracting the disease drop dramatically by 60 percent if they can only lose 10 pounds by following a healthy diet and regular exercise such as walking, according to a report published in the New England Journal of Medicine. (May 3, 2001).


Prediabetes


This word means you are at risk of developing type 2 diabetes and heart disease.


The good news is that if you have prediabetes you can reduce your risk of developing type 2 diabetes and even return to normal glucose levels if you follow the guidelines in this article.


Type 2 diabetes


It was formerly called diabetes which begins in adults, this is the most common form of diabetes. This type of diabetes often starts with insulin resistance, a condition in which the body cannot use insulin properly. People can develop this type of diabetes at any age and it is often associated with the modern lifestyle of fast food, stress and lack of exercise.


Obesity and inactivity increase the risk of developing type 2 diabetes significantly. Traditional remedies include taking diabetes medication, daily aspirin, and controlling blood pressure and cholesterol with prescription medications.


But with moderate weight loss and moderate daily exercise, you can slow down or prevent type 2 diabetes and live a normal life. Let's look at a few steps you can take immediately in your daily life that will make a big difference in your situation.


Strength Training - Researchers have reported a 23% increase in glucose uptake after four months of strength training. Because poor glucose metabolism is associated with adult diabetes, improved glucose metabolism is an important benefit of regular strength exercise.


Today you do not need to sit in the gym to put on active muscles. Short-term High Intensity sessions once a week are all that is needed to improve glucose metabolism and weight loss.


The strength training method I use requires only 20 to 30 minutes a week. Gone are the days of a five-day weekly plan with 6 to 12 sets per body, an approach that has never worked. One short strenuous workout and weekly strength training will boost your metabolism more than you thought you could.


The two main components of this process are strenuous exercise and recovery after exercise. Abnormal, short, high-intensity training sessions, followed by the time required to recover and gain strength are what is needed to increase active muscle mass and improve glucose metabolism.


Nutrition - A way to lose body fat and maintain muscle mass is to have a healthy eating plan. A high quality diet and extra energy are the basics you will need. Excessive and unhealthy foods, low fat and sugar foods


they are not refined they must be beautiful.


Low-fat diets should be eaten throughout the day containing small amounts of protein to maintain muscle and strength levels. Foods that contain important vitamins and minerals should also be taken daily. A high quality supplement of vitamins and minerals should also be taken daily.


As before, get calories from high quality foods but if you can, use a blender to make concoctions with skim milk for any additives you want to use, as long as you count the calories in your daily total.


Now use these solids for solid foods and solid foods for your daily diet. Distribute with small meals a day instead of three traditional meals a day. The way to keep track of weight loss is to buy a calorie counter and record your daily calorie intake for a week.


Exercise - Fat is burned in the body when the cells oxidize to release energy through exercise. When exercise is done slowly to moderate then most of the energy is taken from the fat stores.


The key to effective aerobic training that burns high fat is long-term consistency and not stamina. It doesn't matter if you run a mile, run a mile or walk a mile you will burn exactly the same number of calories.


An excellent exercise for the purpose of losing fat is to move faster indoors on the press or outside. Other aerobic activities are treadmill, cycling, climbing and any other training gear available inside or outside the gym.


There is much you can do to reduce your risk of developing diabetes. With regular exercise, cutting down on fat in your diet and losing weight can all help you reduce your risk of type 2 diabetes.

Show more
0
11
Other News Pakistan

شمائلا رند


پنھنجن کانسواء ڀلا ڪھڙيون عيدو۔۔!!

عيد منعي! خوشي،راحت جنھن ڏينھن جي اچڻ سان ھڪ پاسي محبتن جو جنم ٿيندو آھي ته،ساڳئي ويلي غريبن کي غريب ھئڻ جو احساس به وڌي ويندو آھي! ڇاڪاڻ ڪنھن احساس مند شخص چواڻي ته،آئون عيد جھڙا ڀلارا ۽ خوشين جھڙا ڏينھن ناھيان ملھائيندو ڇو جو انھن خوشين وارن ڏينھن جي اچڻ سان غريبن کي پنھنجي غريب ھئڻ جو احساس وڌي ويندو آھي! عيد جو ڏينھن جتي انيڪ خوشيون کڻي کڻي حاضر ٿيندو آھي، اتي ھي ڏينھن انھي لاء ”خزان“ به بڻجي پوندو آھي! ڇاڪاڻ ته پنھنجن کان پري رھڻ ۽ وري خوشي جھڙن ڏھاڙن جي اچڻ سان جتي ڪنھن پل لاءِ خوشي محسوس ٿيندي آھي، اتي پنھنجائپ جو احساس سچ ۾ آڪٽوبر،نومبر ۽ ڊسمبر ئي لڳندو آھي٠٠ مطلب جيڪي پاڻ کي اڪيلو سمجھندا آھن نه چاھيندي به ھھڙن ڏينھن تي پنھنجن کان پري رھن ٿا، سفري يا وري جسماني مطلب نفرتن جي نگري ۾ ڦاٿل ماڻھو ويجھو ھوندي به ڄڻ زميني وڇوٽي تي ھوندا آھن!عيد ھڪ خوشين جو وقت آهي، پر اهو اسان مان انهن ماڻهن لاءِ به بيحد اداسي آهي، جيڪي پنهنجي خاندان جي ميمبرن سان گڏ خوشيون ونڊ نٿا ڪن ٿا يقينن سڀني رشتن سان گڏ ماءُ پيءُ جي غير موجودگي جو به ڪو احساس ٿي نٿو سگھي!جيتوڻيڪ منهنجي ماءُ کي وڇڙيل ڇھ سال ٿي ويا آهن، ۽ منهنجي بابا سائين کي چوڏهن سال ٿيا آهن،، سچ ۾ سوچيندي آھيان ڀلا امڙ ۽ بابي کان سواءِ ڀلا شمائلا جون عيدون به ڪھڙيون بس رسم نڀائڻ عيد ملھائڻ مجبوري آھي باقي اندر جي اڌمن جي ور چڙھيل خاص طور تي پنھنجائپ جو احساس ۽ جذبو رکندڙن لاءِ خوشين جي سڀئي ڏينھن ڄڻ وڌيڪ اذيت ڀريا لڳندا آھن،جڏهن ته دنيا جا ھر ڪم ھميشه رھن ٿا، پر ماءُ پيءُ ھميشه ناهي رھندا، ماءُ پيءُ کي وقت ڏيڻ گهرجي عيدون به انھن ساڻ ھونديون آھن، ۽ جن جا ماءُ پيءُ ھن دنيا ۾ نه آھن، ته انهن کي گھرجي ته قبرستان تي وڃن،

Show more
0
8

صبر۔ ایک ایسا لفظ جو ہم اکثر سنتے ہیں۔ غم میں، پریشانی میں، درد میں اور تکلیف میں۔ یہاں تک کہ جب ہماری کوئی دعا پوری نہ ہو رہی ہو تب بھی سب سے پہلے جو لفظ ہمارے ذہن میں آتا ہے وہ صبر ہوتا ہے۔ لیکن یہ صبر ہوتا کیا ہے؟

صبر عربی زبان کا لفظ ہے جس کا روٹ ورڈ (ص۔ب.ر) ہے ۔ صبر کا مطلب خود کو باندھ لینا ہوتا ہے، باز رکھنا یا خود کو منفی ردعمل سے روکنا ہے۔ صبر آنسو نہ بہانے کا نام نہیں ہے کیونکہ اگر آنسو نہ بہانے ہوتے تو اللہ آنسو بناتے ہی نہیں۔ صبر تو ایک پوزیٹو ردعمل کا نام ہے۔

صبر کا مطلب ہے :

درد اور تکلیف میں یہ یقین رکھ کر پر سکون رہنا کہ یہ اللہ کی آزمائش ہے۔ اس بات پر یقین رکھنا کہ اگر غم اور پریشانی اللہ نے دی ہے تو اس کا حل بھی وہی نکالے گا۔

یہ یقین رکھنا کہ اگر وہ ہماری دعا ابھی نہیں سن رہا تو کبھی تو سنے گا۔

صبر اس چیز کا نام ہے کہ ہم اپنی اس ایک قبول نہ ہونے والی دعا سے نظریں ہٹا کر دوسری نعمتوں کو دیکھیں۔ اس وقت میں قبول ہونی والی باقی دعاؤں پر نظریں جمائیں اور خود کو مایوسی کے سمندر سے نکال لیں۔

پتا ہے ایک بار میں نے کہیں سنا تھا کہ ہمیں اللہ سے صبر نہیں مانگنا چاہئے کیونکہ اس کے بعد ہم اپنی زندگی کے ایسے فیز میں داخل ہوجاتے ہیں جہاں آزمائشیں ہوتی ہیں، تکالیف ہوتیں ہیں تاکہ ہم صبر کرنا سیکھ سکیں۔

لیکن صبر کے معنی سمجھنے کے بعد مجھے لگتا ہے کہ ہمیں اللہ سے صبر ضرور مانگنا چاہئے۔ صبح شام مانگنا چاہئے بلکہ ہر وقت مانگنا چاہئے کیونکہ جب ہم میں صبر ہو گا تو ہم مایوس نہیں ہوں گے۔ ڈھلتا سورج دیکھ کر ہمارے اندر تنہائی کا جو غبار اٹھتا ہے وہ نہیں اٹھے گا۔ ہمارے اندر کا سمندر پر سکون ہو جائے گا۔

Positivity is the keyto happiness 🖤🖇️

Show more
0
13
https://avalanches.com/pk/mardan_former_prime_minster_of_islamic_republic_of_pakistan_tweeted1932734_26_04_2022

Former Prime Minster of Islamic republic of Pakistan Tweeted

Strongly condemn the terrorist attack targeting Chinese teachers of Karachi University. This is yet another attack with a specific agenda of trying to undermine Pak-China strategic r'ship. We must ensure defeat of this foreign-backed agenda of our enemies.

Show more
0
14
Other world news
https://avalanches.com/ru/kazan_v_kazany_sotrudnyky_spetspodrazdelenyi_roshvardyy_provely_pokazatelno1965461_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_v_kazany_sotrudnyky_spetspodrazdelenyi_roshvardyy_provely_pokazatelno1965461_04_05_2022

В Казани сотрудники спецподразделений Росгвардии провели показательное занятие для студентов юридического института


Сотрудники казанского ОМОН и СОБР Управления Росгвардии по Республике Татарстан организовали экскурсию и выездное занятие для студентов казанского филиала Всероссийского государственного университета юстиции.

В преддверии празднования Дня Победы в расположении ОМОН «Ак Барс» Управления Росгвардии по РТ состоялось выездное военно-патриотическое занятие для студентов казанского филиала Всероссийского государственного университета юстиции. В проведении занятий приняли участие также сотрудники СОБР «Тимер Батыр» и кинологи МВД по Республике Татарстан. Будущие юристы, большинство из которых проходят обучение на кафедре уголовного процесса и криминалистики, задавали много вопросов и интересовались различными подробностями.

Студентам показали практическую работу кинологов с собаками при поиске запрещённых веществ, опасных предметов, а также при задержании преступников. Затем вниманию гостей представили выставку вооружения и специальной техники спецподразделения Росгвардии, подробно рассказали о назначении и особенностях каждого элемента экспозиции. Сотрудники СОБР продемонстрировали мастерство в высотной подготовке, выполнив эффектные спуски с 20-метрового здания.

«Для нас было очень важно провести выездные занятия именно в боевом подразделении Росгвардии, чтобы студенты лично пообщались с правоохранителями, которые стоят на переднем крае борьбы с преступностью и терроризмом», - отметил доцент кафедры уголовного процесса и криминалистики Газинур Хуснетдинов.

В завершение мероприятия с гостями провели патриотическую беседу и показали документальный фильм о войсках национальной гвардии Российской Федерации.

Show more
1
24
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022

Военный оркестр казанского полка Росгвардии обеспечил музыкальное сопровождение Пасхального бала в столице Татарстана

В Казанской ратуше состоялся первый республиканский Пасхальный бал в котором приняли участие более трёхсот юношей и девушек со всей республики. В просторном холле исполнялись исторические танцы, которые танцевали на первых балах, учреждённых Петром Первым.

Музыкальное сопровождение мероприятия осуществлял военный оркестр казанского специального моторизованного полка Приволжского округа войск национальной гвардии Российской Федерации под управлением заслуженного артиста Республики Татарстан майора Вадима Кравчука. Военные музыканты на высоком профессиональном уровне исполнили знаменитые вальсы и произведения русской классической музыки.

Show more
0
9