DO WE NEED TO EMPOWER SOCIAL WELFARE DE Tando Adam

https://avalanches.com/pk/tando_dam__do_we_need_to_empower_social_welfare_department_sindh_having_a_prope589687_12_07_2020

DO WE NEED TO EMPOWER SOCIAL WELFARE DEPARTMENT SINDH?


Having a proper mechanism to monitor activities of NGOs and sufficient staff at Taluka level in all the districts of Sindh, Social Welfare Department had failed to keep an eye on all the NGOs of Sindh due to hurdles of many registration authorities such as Industrial Ministry, SECP, SWD, etc. Social has not only office set-up along with Man-power but also social mobilizers such as Auxiliary Workers, Child Care Workers, Assistants to combat any hazardous. The prime aim of this department is to provide welfare at grass root level as they have capability too; however, the ambiguity of registration Authority has always troubled the general public, law enforcement agencies and even the controlling Authority. Thousands of NGOs have been registered with various ministries and departments of the Sindh government, including the departments of social welfare under the Voluntary Agencies (Registration & Control) Ordinance-1961, Industries and Cooperative Societies (Societies Registration Act-1860). Of them, many fall under cooperative societies. However, they do not have mandate for & mechanism to monitor the activities of Charitable Organization; even though, they haven’t proper skills & desired capability with the degrees of Sociology or Social Work to monitor behavior of society & the working of NGOs. This creates trouble in data collection; when enquired, the NGOs deny submitting data because they don’t fall under domain of Social Welfare and it paves the ways for black sheeps to misuse the charity funds by getting registration from many departments at the same time.


The social Welfare Department has a proper mechanism and officers to observe the activities of NGOs under the 1961 and 1962 Act of Voluntary Agencies. Many NGO officials have come to know about the wave of tough vigilance and decided against getting their organisations registered under the social welfare department. If they get their NGOs registered by the department, they will have to submit an annual audit report, the annual renewal fee of Rs2,000 and an election report of office bearers after every two years at the office of the department’s Assistant Director at their concerned Taluka. In addition, all activities carried out under the name of the NGO will be closely monitored by the relevant Assistant Director. Such steps prevent the misuse of donations and other related funds.


In light of these concerns, a good step has been taken recently, The Sindh Charities Registration and Regulation Bill, 2019 had been passed by the Provincial Assembly of Sindh on 22nd November, 2019 and assented to by the Governor of Sindh on 02nd December, 2019 is hereby published as an Act of the Legislature of Sindh.


The Government of Sindh has got passed a legislation bill to regulate charity activities in the province. The law will provide a legal basis for action against the organizations involved in criminal or political activities while operating under the veil of charity. Sindh Charities Act 2019 will regulate charity activities including those donating and those receiving donations for charity.


The minister, adviser or special assistant to the chief minister on Social Welfare Department will be the chairperson of the commission and in his absence, it may be any other person nominated by the CM that has cleared that Charities will only be registered under Charities Act. The provincial government will designate one of the Director-Generals ranked at Grade 20 from within the Social Welfare Department as the director-general of the commission. The deputed official will also work as the secretary of the commission – responsible for the administration and implementation of decisions. According to the law, the commission will maintain public trust and confidence in charities. It will register, regulate, and sanction fundraising of the charities.


The law makes it necessary to register the charity organizations, promoters and the fundraising campaigns. The donors would have to inform about their source of income, the draft of the law suggests. Sindh Charity Commission and Charity Registration Authority will also be established under the law. The draft of the bill also suggests depositing all donations above Rs 50,000 in banks. A charity organization, trustees will be liable to imposition of a fine up to one million over violation of the law, the draft proposes. After enactment of the Sindh Charities Act 2019, action will be launched against unregistered non-profit organizations. In the bill, there is a provision for the creation of a commission, titled, ‘Charities, Registration and Regulation Commission’ which will have 12 members, including two MPAs nominated by the Sindh Assembly speaker. The commission will discharge its functions, exercise its powers and conduct its proceedings in the prescribed manner. The charity organizations will be bound to keep a detailed record of their all financial transactions and the charity amount and donations will not be utilized for any business or political objective. All financial and social activities of a charity organization will be monitored and the Sindh Charity Commission could cancel the registration of a charity over violation of the law.




Raza Muhammad Memon

Assistant Director

Social Welfare Department, Hyderabad


41306-5362259-7

[email protected]

0336-3097564


0
21
There are no advertisements in the Tando Adam yet
Other News Raza Muhammad Memon
https://avalanches.com/pk/tando_dam__589688_12_07_2020

کیا ہمیں با اختیار محکمہ سماجی بہبود سندھ کی ضرورت ہے؟


سندھ کے تمام اضلاع میں تعلقی سطح پر غیر سرکاری تنظیموں کی سرگرمیوں کی نگرانی کے لئے ایک مناسب طریقہ کار موجودنہیں ہے ، محکمہ سوشل ویلفیئر سندھ کے تمام این جی اوز پر نظر رکھنے میں ناکام رہا تھا کیوں کہ این جی او کی رجسٹریشن کے متعدد ڈپارٹمیٹ ہیں جو بوقت رجسٹریشن کر رہے ہیں۔ وزارت صنعت ، ایس ای سی پی سمیت ایس ڈبلیو ڈی وغیرہ۔ سوشل ویلفیئر کے پاس کسی بھی سماجی کام کرنےاور سماجی مسئلے کا مؤثر طریقے سے مقابلہ کرنے کے لئے

اسٹاف جیسے ورکرز ، بچوں کی دیکھ بھال کے کارکنان ،اور معاونین موجود ہیں۔



اس محکمے کا بنیادی مقصد نچلی سطح پر فلاح فراہم کرنا ہے کیونکہ ان میں بھی صلاحیت موجود ہے۔ تاہم ، رجسٹریشن اتھارٹی کا ابہام ہمیشہ ہی عام لوگوں ، قانون نافذ کرنے والے اداروں اور یہاں تک کہ کنٹرولنگ اتھارٹی کو پریشان کرتا ہے۔ رضاکارانہ ایجنسیوں (رجسٹریشن اینڈ کنٹرول) آرڈیننس -1961 ، انڈسٹریز اینڈ کوآپریٹو سوسائٹی (سوسائٹی رجسٹریشن ایکٹ 1860) کے تحت سماجی بہبود کے محکموں سمیت سندھ حکومت کی مختلف وزارتوں اور محکموں کے ساتھ ہزاروں غیر سرکاری تنظیمیں رجسٹرڈ ہیں۔ ان میں سے بہت سارے کوآپریٹو سوسائٹیوں کے ماتحت ہیں۔ تاہم ، ان کے پاس خیراتی آرگنائزیشن کی سرگرمیوں کی نگرانی کے لئے میکانزم کا کوئی مینڈیٹ نہیں ہے۔ اس کے باوجود ، ان کے پاس معاشرے کے سلوک اور این جی اوز کے کام کی نگرانی کے لئے سوشیالوجی یا سوشل ورک کی ڈگری کے ساتھ مناسب مہارت اور مطلوبہ صلاحیت نہیں ہے۔


اس سے ڈیٹا اکٹھا کرنے میں پریشانی پیدا ہوتی ہے۔ جب انکوائری کی جاتی ہے تو ، غیر سرکاری تنظیمیں اعداد و شمار جمع کرنے سے انکار کردیتی ہیں کیونکہ وہ سوشل ویلفیئر کے ڈومین کے تحت نہیں آتی ہیں اور اس سے ایک ہی وقت میں بہت سارے محکموں سے رجسٹریشن حاصل کرکے کالی بھیڑوں کو چیریٹی فنڈز کا غلط استعمال کرنے کی راہ ہموار ہوتی ہے۔


محکمہ سوشل ویلفیئر کے پاس رضاکارانہ ایجنسیوں کے ایکٹ 1961 اور 1962 کے تحت این جی اوز کی سرگرمیوں کا مشاہدہ کرنے کے لئے ایک مناسب طریقہ کار اور افسران موجود ہیں۔ این جی او کے بہت سارے اہلکار سخت نگرانی کی لہر کے بارے میں جان چکے ہیں اور انہوں نے محکمہ سوشل ویلفیئر کے تحت اپنی تنظیموں کو رجسٹرڈ کروانے کے خلاف فیصلہ کیا ہے۔


اگر وہ محکمہ سوشل ویلفیئر کے ذریعہ اپنی این جی اوز کو رجسٹرڈ کرواتے ہیں تو ، انہیں اپنے متعلقہ محکمہ کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کے دفتر میں ہر سال کے بعد سالانہ آڈٹ رپورٹ ،دو ھزار روپے کی سالانہ تجدید فیس اور عہدیداروں کی انتخابی رپورٹ پیش کرنا ہوگی۔ اس کے علاوہ ، این جی او کے نام سے کی جانے والی تمام سرگرمیوں پر متعلقہ اسسٹنٹ ڈائریکٹر کے ذریعہ کڑی نگرانی کی جائے گی۔ اس طرح کے اقدامات عطیات اور دیگر متعلقہ فنڈز کے غلط استعمال کو روکتے ہیں۔


ان خدشات کی روشنی میں حال ہی میں ، سندھ چیریٹیز رجسٹریشن اینڈ ریگولیشن بل ، 2019 کو 22 نومبر ، 2019 کو سندھ کی صوبائی اسمبلی نے منظور کیا تھا اور 02 دسمبر ، 2019 کو گورنر سندھ نے اس کی منظوری دی تھی۔ اس کے ذریعہ یہ قانون سازی سندھ کے ایکٹ کے بطور شائع ہوا ہے۔



حکومت سندھ نے صوبے میں خیراتی سرگرمیوں کو منظم کرنے کے لئے ایک قانون سازی بل پاس کیا ہے۔ یہ قانون خیراتی اداروں کے پردے کے تحت کام کرتے ہوئے مجرمانہ یا سیاسی سرگرمیوں میں ملوث تنظیموں کے خلاف کارروائی کی قانونی بنیاد فراہم کرے گا۔ سندھ چیریٹیز ایکٹ 2019 خیراتی سرگرمیوں کو باقاعدہ نظر رکھے گا جس میں عطیہ کرنے والوں اور خیراتی اداروں کے لئے چندہ وصول کرنے والے افراد شامل ہیں۔


محکمہ سوشل ویلفیئر کے وزیر ، مشیر یا وزیر اعلی کا معاون خصوصی اس کمیشن کا چیئرپرسن ہوگا اور ان کی عدم موجودگی میں ، یہ وزیر اعلی کے ذریعہ نامزد کوئی دوسرا فرد ہوسکتا ہے جس نے واضح کیا ہے کہ چیریٹیز صرف چیریٹی ایکٹ کے تحت رجسٹرڈ ہوگا۔



صوبائی حکومت محکمہ سوشل ویلفیئر کے اندر سے گریڈ

20 میں درج ایک ڈائریکٹر جنرل کو کمیشن کا ڈائریکٹر جنرل مقرر کرے گی۔ اہلکار کمیشن کے سیکریٹری کی حیثیت سے بھی کام کریں گے۔ انتظامیہ اور فیصلوں کے نفاذ کا ذمہ دار۔ قانون کے مطابق ، کمیشن خیراتی اداروں پر عوام کا اعتماد اور اعتماد برقرار رکھے گا۔ اس سے چیریٹیوں کے فنڈ ریزنگ میں اندراج ، انضباط اور منظوری ہوگی۔


قانون خیراتی تنظیموں ، پرموٹروں اور فنڈ ریزنگ محکموں کو رجسٹر کرنا ضروری بناتا ہے۔ قانون میں بتایا گیا ہے کہ ڈونرز کو اپنی آمدنی کے ذرائع کے بارے میں آگاہ کرنا ہوگا۔ قانون کے تحت سندھ چیریٹی کمیشن اور چیریٹی رجسٹریشن اتھارٹی بھی قائم کیا جائے گا۔ ایکٹ میں یہ بھی تجویز کیا گیا ہے کہ وہ تمام چندہ پچاس ھزار روپے سے زائد بنکوں میں جمع کروائیں۔ اس مسودے میں تجویز کیا گیا ہے کہ ایک خیراتی تنظیم ، ٹرسٹی قانون کی خلاف ورزی پر دس لاکھ تک جرمانہ عائد کرنے کے لئے ذمہ دار ہوگی۔ سندھ چیریٹیز ایکٹ 2019 کے نفاذ کے بعد غیر رجسٹرڈ غیر منافع بخش تنظیموں کے خلاف کارروائی کا آغاز کیا جائے گا۔


ایکٹ میں ، ایک کمیشن تشکیل دینے کا انتظام کیا گیا ہے ، جس کا عنوان ہے ، ‘چیریٹیز ، رجسٹریشن اینڈ ریگولیشن کمیشن’ جس میں 12 ممبر ہوں گے ، جن میں سندھ اسمبلی کے اسپیکر کے ذریعہ نامزد دو ایم پی اے بھی شامل ہیں۔ کمیشن اپنے فرائض سرانجام دے گا ، اپنے اختیارات کا استعمال کرے گا اور مقررہ انداز میں اس کی کارروائی کرے گا۔ چیریٹی تنظیمیں اپنے تمام مالی لین دین اور خیراتی رقم اور عطیات کے بارے میں تفصیلی ریکارڈ رکھنے کے پابند ہوں گی اور کسی بھی کاروبار یا سیاسی مقصد کے لئے استعمال نہیں ہوں گی۔ کسی چیریٹی تنظیم کی تمام مالی اور سماجی سرگرمیوں کی نگرانی کی جائے گی اور سندھ چیریٹی کمیشن قانون کی خلاف ورزی پر چیریٹی کی رجسٹریشن منسوخ کرسکتا ہے۔



رضا محمد میمن


Show more
0
67
Other News Pakistan

شمائلا رند


پنھنجن کانسواء ڀلا ڪھڙيون عيدو۔۔!!

عيد منعي! خوشي،راحت جنھن ڏينھن جي اچڻ سان ھڪ پاسي محبتن جو جنم ٿيندو آھي ته،ساڳئي ويلي غريبن کي غريب ھئڻ جو احساس به وڌي ويندو آھي! ڇاڪاڻ ڪنھن احساس مند شخص چواڻي ته،آئون عيد جھڙا ڀلارا ۽ خوشين جھڙا ڏينھن ناھيان ملھائيندو ڇو جو انھن خوشين وارن ڏينھن جي اچڻ سان غريبن کي پنھنجي غريب ھئڻ جو احساس وڌي ويندو آھي! عيد جو ڏينھن جتي انيڪ خوشيون کڻي کڻي حاضر ٿيندو آھي، اتي ھي ڏينھن انھي لاء ”خزان“ به بڻجي پوندو آھي! ڇاڪاڻ ته پنھنجن کان پري رھڻ ۽ وري خوشي جھڙن ڏھاڙن جي اچڻ سان جتي ڪنھن پل لاءِ خوشي محسوس ٿيندي آھي، اتي پنھنجائپ جو احساس سچ ۾ آڪٽوبر،نومبر ۽ ڊسمبر ئي لڳندو آھي٠٠ مطلب جيڪي پاڻ کي اڪيلو سمجھندا آھن نه چاھيندي به ھھڙن ڏينھن تي پنھنجن کان پري رھن ٿا، سفري يا وري جسماني مطلب نفرتن جي نگري ۾ ڦاٿل ماڻھو ويجھو ھوندي به ڄڻ زميني وڇوٽي تي ھوندا آھن!عيد ھڪ خوشين جو وقت آهي، پر اهو اسان مان انهن ماڻهن لاءِ به بيحد اداسي آهي، جيڪي پنهنجي خاندان جي ميمبرن سان گڏ خوشيون ونڊ نٿا ڪن ٿا يقينن سڀني رشتن سان گڏ ماءُ پيءُ جي غير موجودگي جو به ڪو احساس ٿي نٿو سگھي!جيتوڻيڪ منهنجي ماءُ کي وڇڙيل ڇھ سال ٿي ويا آهن، ۽ منهنجي بابا سائين کي چوڏهن سال ٿيا آهن،، سچ ۾ سوچيندي آھيان ڀلا امڙ ۽ بابي کان سواءِ ڀلا شمائلا جون عيدون به ڪھڙيون بس رسم نڀائڻ عيد ملھائڻ مجبوري آھي باقي اندر جي اڌمن جي ور چڙھيل خاص طور تي پنھنجائپ جو احساس ۽ جذبو رکندڙن لاءِ خوشين جي سڀئي ڏينھن ڄڻ وڌيڪ اذيت ڀريا لڳندا آھن،جڏهن ته دنيا جا ھر ڪم ھميشه رھن ٿا، پر ماءُ پيءُ ھميشه ناهي رھندا، ماءُ پيءُ کي وقت ڏيڻ گهرجي عيدون به انھن ساڻ ھونديون آھن، ۽ جن جا ماءُ پيءُ ھن دنيا ۾ نه آھن، ته انهن کي گھرجي ته قبرستان تي وڃن،

Show more
0
8

صبر۔ ایک ایسا لفظ جو ہم اکثر سنتے ہیں۔ غم میں، پریشانی میں، درد میں اور تکلیف میں۔ یہاں تک کہ جب ہماری کوئی دعا پوری نہ ہو رہی ہو تب بھی سب سے پہلے جو لفظ ہمارے ذہن میں آتا ہے وہ صبر ہوتا ہے۔ لیکن یہ صبر ہوتا کیا ہے؟

صبر عربی زبان کا لفظ ہے جس کا روٹ ورڈ (ص۔ب.ر) ہے ۔ صبر کا مطلب خود کو باندھ لینا ہوتا ہے، باز رکھنا یا خود کو منفی ردعمل سے روکنا ہے۔ صبر آنسو نہ بہانے کا نام نہیں ہے کیونکہ اگر آنسو نہ بہانے ہوتے تو اللہ آنسو بناتے ہی نہیں۔ صبر تو ایک پوزیٹو ردعمل کا نام ہے۔

صبر کا مطلب ہے :

درد اور تکلیف میں یہ یقین رکھ کر پر سکون رہنا کہ یہ اللہ کی آزمائش ہے۔ اس بات پر یقین رکھنا کہ اگر غم اور پریشانی اللہ نے دی ہے تو اس کا حل بھی وہی نکالے گا۔

یہ یقین رکھنا کہ اگر وہ ہماری دعا ابھی نہیں سن رہا تو کبھی تو سنے گا۔

صبر اس چیز کا نام ہے کہ ہم اپنی اس ایک قبول نہ ہونے والی دعا سے نظریں ہٹا کر دوسری نعمتوں کو دیکھیں۔ اس وقت میں قبول ہونی والی باقی دعاؤں پر نظریں جمائیں اور خود کو مایوسی کے سمندر سے نکال لیں۔

پتا ہے ایک بار میں نے کہیں سنا تھا کہ ہمیں اللہ سے صبر نہیں مانگنا چاہئے کیونکہ اس کے بعد ہم اپنی زندگی کے ایسے فیز میں داخل ہوجاتے ہیں جہاں آزمائشیں ہوتی ہیں، تکالیف ہوتیں ہیں تاکہ ہم صبر کرنا سیکھ سکیں۔

لیکن صبر کے معنی سمجھنے کے بعد مجھے لگتا ہے کہ ہمیں اللہ سے صبر ضرور مانگنا چاہئے۔ صبح شام مانگنا چاہئے بلکہ ہر وقت مانگنا چاہئے کیونکہ جب ہم میں صبر ہو گا تو ہم مایوس نہیں ہوں گے۔ ڈھلتا سورج دیکھ کر ہمارے اندر تنہائی کا جو غبار اٹھتا ہے وہ نہیں اٹھے گا۔ ہمارے اندر کا سمندر پر سکون ہو جائے گا۔

Positivity is the keyto happiness 🖤🖇️

Show more
0
13
https://avalanches.com/pk/peshawar_1937286_29_04_2022

سیاسی شعور

مدثرعباس


اس وطن عزیز میں جمہوریت کو ایک اعلی مقام حاصل ہیں، جو لوگ اس وطن عزیز کے ہمدرد ہے وہی لوگ اس وطن عزیز میں رہتے ہوئے غریب لوگوں کو انکے حقوق دلانے میں سیاسی طریقہ کار کو اپنا کر ایک حاص فلور پر غریبوں کے حقوق کیلئے لڑتے ہیں، اب یہاں پر دو قسم سیاسی لوگ سیاست کرتے ہیں جو ایک دوسرے میں ضم ہونے جارہی ہیں، ایک اعلی تعلیم یافتہ اور دوسرے اَن پڑھ لوگ، کہنے کا مطلب ہے کہ سیاست میں ایک قسم گروہ ضم ہورہی ہیں، جو کہ نا تو سیاست کا طریقہ کار جانتے ہے اور نا ہی تنظیم سازی، وہی گروہوں میں سیاسی شعور کی عدم موجودگی کے باعث یہ سیاست سے فرقہ واریت کا راستہ اختیار کرلیتی ہیں _ جو کہ اس سے بدامنی کو پورا موقع مل جاتی ہیں اور وہ اس ریاست کی ساکھ کو مٹی میں ملا کر خاک کردیتی ہیں، تو سیاست میں فرقہ واریت سے بچنے کیلئے سیاسی لیڈروں کو سب سے پہلے تعلیم و تربیت پر کام کرنا ہوگا اور اس کے بعد سیاسی شعور کو لوگوں میں ایک مہذب انداز سے پیدا کرنے ہوگا جو کہ لوگوں میں دوسرے سیاسی پارٹیوں اور اُن کے کارکنوں کو بھی عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتاہوں، پر اس وطن عزیز میں سیاسی لیڈروں کا منشور، گالی گلوچ، چور ڈاکوں، پٹواری، یوتھیا، اسکے علاوہ سیاسی لیڈروں کو کہنے کیلئے کچھ بھی نہیں، کیونکہ نا تو اس ملک عزیز میں بلوچ قوم پر ظلم ہورہاہیں نا تو یہ ملک عزیز ترقی میں کسی کے پیچھے ہیں جو کہ سیاسی لیڈر اس پر کام کریں اور اس ملک عزیز کو دنیا کی نظروں میں اہمیت دیں ..........

یہاں پر ہمارے پاس سیاسی شعور کی کمی کا امدازہ اس لگایا جاسکتا ہیں کہ کوئی جرنلسٹ سوال اٹھائے تو انکو بھی گالیوں کا ہار پہنایا جاتا ہیں اور یہ چیز پاکستان کو اندر سے کمزور کرنے میں حد درجے مدد دیتا ہیں جو کہ زوال کی نشانیوں میں سے ایک ہیں


Show more
0
4
Other world news
https://avalanches.com/ru/kazan_v_kazany_sotrudnyky_spetspodrazdelenyi_roshvardyy_provely_pokazatelno1965461_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_v_kazany_sotrudnyky_spetspodrazdelenyi_roshvardyy_provely_pokazatelno1965461_04_05_2022

В Казани сотрудники спецподразделений Росгвардии провели показательное занятие для студентов юридического института


Сотрудники казанского ОМОН и СОБР Управления Росгвардии по Республике Татарстан организовали экскурсию и выездное занятие для студентов казанского филиала Всероссийского государственного университета юстиции.

В преддверии празднования Дня Победы в расположении ОМОН «Ак Барс» Управления Росгвардии по РТ состоялось выездное военно-патриотическое занятие для студентов казанского филиала Всероссийского государственного университета юстиции. В проведении занятий приняли участие также сотрудники СОБР «Тимер Батыр» и кинологи МВД по Республике Татарстан. Будущие юристы, большинство из которых проходят обучение на кафедре уголовного процесса и криминалистики, задавали много вопросов и интересовались различными подробностями.

Студентам показали практическую работу кинологов с собаками при поиске запрещённых веществ, опасных предметов, а также при задержании преступников. Затем вниманию гостей представили выставку вооружения и специальной техники спецподразделения Росгвардии, подробно рассказали о назначении и особенностях каждого элемента экспозиции. Сотрудники СОБР продемонстрировали мастерство в высотной подготовке, выполнив эффектные спуски с 20-метрового здания.

«Для нас было очень важно провести выездные занятия именно в боевом подразделении Росгвардии, чтобы студенты лично пообщались с правоохранителями, которые стоят на переднем крае борьбы с преступностью и терроризмом», - отметил доцент кафедры уголовного процесса и криминалистики Газинур Хуснетдинов.

В завершение мероприятия с гостями провели патриотическую беседу и показали документальный фильм о войсках национальной гвардии Российской Федерации.

Show more
1
24
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022
https://avalanches.com/ru/kazan_voenni_orkestr_kazanskoho_polka_roshvardyy_obespechyl_muzkalnoe_sop1965460_04_05_2022

Военный оркестр казанского полка Росгвардии обеспечил музыкальное сопровождение Пасхального бала в столице Татарстана

В Казанской ратуше состоялся первый республиканский Пасхальный бал в котором приняли участие более трёхсот юношей и девушек со всей республики. В просторном холле исполнялись исторические танцы, которые танцевали на первых балах, учреждённых Петром Первым.

Музыкальное сопровождение мероприятия осуществлял военный оркестр казанского специального моторизованного полка Приволжского округа войск национальной гвардии Российской Федерации под управлением заслуженного артиста Республики Татарстан майора Вадима Кравчука. Военные музыканты на высоком профессиональном уровне исполнили знаменитые вальсы и произведения русской классической музыки.

Show more
0
9